کون لوگ ہو تسی اوئے

ہفتہ کی صبح موبائل کی گھنٹی نے بیدار کر دیا، ادھ کھلی آنکھوں سے دیکھا تو دفتر سے فون تھا۔ معلوم ہوا کہ فوری طور پر کوئی کام ہے اور ای میل چیک کرنے کا حکم ہے۔ کمپیوٹر اور وائر لیس سیٹ کی خرابی کے باعث گھر پر یہ کام ممکن نہ تھا اس لیے فوری طور پر باہر کا رخ کیا۔ صبح صبح کا وقت تھا اور رات گئے تک اپنی "خدمات" فراہم کرنے والے انٹرنیٹ کیفے ابھی کھلنا شروع نہیں ہوئےتھے۔ نصف گھنٹہ گلیوں میں بے مقصد گھومنے پھرنے کے بعد ایک انٹرنیٹ کیفے کا دروازہ کھلا نظر آیا۔ اندر گیا تو اس کا "مالک" ابھی جھاڑو دے رہا تھا۔ مجھے دیکھتے ہی کیبن نمبر 1 کی جانب اشارہ کیا۔ میں نےجاتے ہی براؤزر میں مطلوبہ سائٹ کھولنا چاہی لیکن server not foundکا پیغام منہ چڑاتا رہا۔
جھلا کر پوچھا "بھئی نیٹ کیوں نہیں چل رہا"
معصوم سا جواب "جناب نیٹ تو تین دن سے مسئلہ کر رہا ہے، آپ فلمیں اور گانے وغیرہ دیکھ لیں، سرور پر "تمام اقسام" کی فلمیں اور گانے رکھے ہیں"
میں لاحول پڑھتا ہوا نکل آیا اور منہ سے بے اختیار نکلا "کون لوگ ہو تسی اوئے؟"

آپ یہ صفحات بھی دیکھنا پسند کریں گے ۔ ۔ ۔

12 تبصرے

  1. دوست says:

    ہاہاہاہاہاہا
    نیٹ‌ کیفے پر یہی کچھ ہوتا ہے بھولے بادشاہو۔

    دوست کے بلاگ سے آخری تحریر ہے ..سرجی

  2. ہاں واقعی سوچنے کی بات ہے!

    محمد وارث کے بلاگ سے آخری تحریر ہے ..امیر خسرو کی ایک غزل مع تراجم

  3. بدتمیز says:

    سیل فون سے چیک کر لینی تھی

  4. ان نیٹ کیفیز نے تو اس قدر گند مچایا ہے کہ خدا کی پناہ۔۔۔ اور یہ کام اس قدر عام اور دھڑیلے سے کیا جا رہا ہے کہ کوئی پوچھنے والا ہی نہیں۔۔۔۔ کیا یہ اسلامی جمہوریہ ہے؟؟؟ حکومت کو چاہیے کہ وہ فورا اس کے خلاف اقدامات کریں۔۔۔۔ نیٹ کیفیز میں کیبین بنانے کی اجازت نہیں ہونی چاہیے۔۔ 😡

    عادل جاوید چودھری کے بلاگ سے آخری تحریر ہے ..ڈیزل کی قیمت میں 3 روپے کی کمی، عوام سے مذاق

  5. واقعی آپ کو اب پتا چلا ہے!! 😆

    شعیب صفدر کے بلاگ سے آخری تحریر ہے ..Operation Lionheart

  6. ماوراء says:

    تمام اقسام کے گانے اور فلمیں۔۔ 😛 :mrgreen:
    ویسے اتنے ویلے لوگ بھی ہوتے ہیں جو نیٹ کیفے پر جا کر گانے اور فلمیں دیکھتے ہیں۔ 😐

  7. ابوشامل says:

    دوست بھائی، بھولے بادشاہو نہ ہوتے تو حیرت بھی نہ ہوتی 😀
    بدتمیز، سیل فون سے صرف چیک ہی کر سکتا تھا، لیکن اپنے کمپیوٹر کی خرابی کے باعث کام نہیں کرپاتا۔ اس لیے نیٹ کیفے جانا ضروری ٹھہر گیا۔
    عادل! حیرت کی بات یہی ہے کہ یہ سب دھڑلے کے ساتھ کیا جا رہا ہے، اسی لیے مجھے حیرت کا شدید جھٹکا لگا۔
    شعیب بھائی! مجھے واقعی اب پتہ چلا ہے کہ فلمیں اور گانے دیکھنے کے لیے بھی لوگ نیٹ کیفے میں بیٹھتے ہیں۔ 😯
    ماوراء! ان ویلے لوگوں کی تعداد اتنی زیادہ ہے کہ جس علاقے میں میں گیا تھا وہاں ہر گلی میں کم از کم ایک انٹرنیٹ کیفے ہے اور زیادہ سے زیادہ دو اور تین بھی۔ اب آپ اندازہ لگا لیجئے۔ اصل میں اُس علاقے میں بیرون شہر سے آنے والے لوگوں کی بڑی تعداد رہتی ہے جن کی اکثریت نے اپنے فارغ اوقات میں یہ سستی "مصروفیت" ڈھونڈ رکھی ہے۔ "نہ ہینگ لگے نہ پھٹکری اور رنگ بھی چوکھا آئے" 🙂

  8. ہاہاہا۔۔۔۔۔
    فہد بھائی آپ تو واقعی بڑے بھولے نکلے۔ ڈھنگ کے انٹرنیٹ کیفے چند ایک میں نے صرف اسلام آباد میں دیکھے۔ جہاں واقعی آپ جا کر کام کر سکتے ہیں۔ پچھلے تین سال سے میں‌نہیں گیا ویسے۔

  9. بھائی کیا بات کرتے ہو 😀 نیٹ کیفیز میں انٹرنیٹ کا کیا کام 🙄

    عبدالقدوس کے بلاگ سے آخری تحریر ہے ..پاکستانی ہیکرز کا جواب (ہم سورہے ہیں‌ مرے نہیں)

  10. ڈفر says:

    بڑا شریف نیٹ کیفے تھا
    کیونکہ میری معلومات کے مطابق
    نیٹ کیفے میں صرف فلموں اور گانوں کی سہولت ہی دستیاب نہیں ہوتی

    ڈفر کے بلاگ سے آخری تحریر ہے ..ویلکم بیک

  11. ڈفر says:

    عبدالقدوس کا کمنٹ میرے دل کی آواز ہے :mrgreen:

    ڈفر کے بلاگ سے آخری تحریر ہے ..ویلکم بیک

  12. طالوت says:

    بد قسمتی سے ہمارے یہاں ہر نئی آنے والی چیز کو قبول تو کر لیا جاتا ہے مگر اس کے منفی و مثبت پہلووں کی طرف کسی طرف سے بھی رہنمائی نہیں کی جاتی ۔۔ اس سلسلے میں حکومت ، اساتذہ اور والدین کی ذمہ داری بنتی ہے کہ انٹرنیٹ کے صحیح استمعال کو اجاگر کیا جائے ۔۔
    وسلام

اپنی رائے کا اظہار کریں

Your email address will not be published. Required fields are marked *

This site uses Akismet to reduce spam. Learn how your comment data is processed.